AhsaaS Care

ماتھے پہ سیاہ داغ ،،
گرمی کی شدت اور لو نے میرا سانس لینا محال کیا ھوا تھا اور اوپر سے گاڑی کا اے سی بھی کام کرنا چھوڑ گیا تھا ،،

میں نے گاڑی کی ہیٹ کم کرنے اور تھوڑی تازہ ھوا کھانے کے لئے گاڑی سڑک کے کنارے چھاؤں میں کھڑی کر دی اور خود گاڑی سے باہر نکل کر اپنی قسمت کو کوسنے لگا ،،،،
یہ اے سی نے بھی آج ھی خراب ہونا تھا ،،
میں منہ میں بڑبڑا رہا تھا ،،،
کہ اچانک مجھے ایک معصوم سی آواز نے اپنی طرف متوجہ کیا ،،،
صاحب جی میرے بھائی نے صبح سے کچھ نہیں کھایا
صبح سے میری کوئی پنسل نہیں بکی
یہ کوئی 12، 13 سالہ بچی تھی جو ایک ہاتھ میں پنسلوں کا بنڈل اور دوسرے ہاتھ کی انگلی اپنے چھوٹے بھائی کے ہاتھ میں تھمائے مجھ سے مخاطب تھی ،،،
اس کا چھوٹا بھائی عجیب سی سوالیہ نظروں سے کبھی میرے چہرے اور کبھی اپنی بہن کو دیکھ رہا تھا ،،
صاحب جی لے لو نا ایک پنسل صرف 10 روپے کی ھے ،،
بچی نے ایک بار پھر مجھ سے اصرار کیا
میرا گرمی سے برا حال تھا
جی چاہا کہ ان دونوں کو جھڑکی دے کے یہاں سے بھگا دوں مگر پھر نجانے کیوں نہ چاہتے ہوۓ میرا ہاتھ میری جیب میں چلا گیا ،،
میں نے والٹ نکالا اور 50 کا نوٹ بچی کی طرف کر دیا اور خود ھی خود میں بڑا سخی بن کے اسے تکبرانہ لہجے میں بولا یہ لو ،،
بچی میرے لہجے سے بے نیاز جلدی سے بولی صاحب جی کتنی پنسلیں دوں ؟؟
10 کی ایک ھے اور 50 کی پانچ ،،
اس کی آواز اور آنکھوں میں عجیب سی خوشی تھی
صاحب جی 5 لے لو میں بھی صبح سے بھوکی ھوں ،،
اور وہ پنسلیں گننا شروع هو گئی ،،
مجھے اس پہ عجیب سا غصہ آنے لگا
اور دوسری طرف منہ پھیر کے میں نے بولا
لے جاؤ پیسے اور جان چھوڑو نہیں چاہئے مجھے پنسل
دوسری طرف کوئی جواب نہیں تھا بس خاموشی تھی ،
چند لمحوں بعد یہ سوچ کر میں نے رخ پیچھے پھیرا کے وہ دونوں جا چکے ھوں گے ،،
مگر میرا اندازہ غلط نکلا
بچی کی آنکھوں میں نمی تھی اور اس کی آواز اس کے حلق میں دبی تھی
پچاس کا نوٹ میری طرف بڑھا کر اس نے بہت مشکل سے مجھے بولا ،،
نہیں صاحب جی
میں بھیک نہیں مانگتی
ماں کہتی ھے جو بھیک مانگتے ہیں قیامت والے دن ان کے ماتھے پر
،،،، سیاہ داغ هو گا ،،،

یہ کہہ کر اس نے پچاس کا نوٹ میرے ہاتھ میں تھما دیا اور اپنے بھائی کا ہاتھ پکڑ کر واپس مڑ گئی ،،
میں پھٹی ہوئی آنکھوں سے انہیں جاتا ھوا دیکھ رہا تھا
مجھے میرا دل کسی بہت ھی گہری کھائی میں گرتا ھوا محسوس هو رہا تھا
اس کا یہ جملہ میرے کانوں اور ذہن میں زور زور سے گونج رہا تھا ،،
ماں کہتی ھے جو بھیک مانگتے ہیں قیامت والے دن ان کے ماتھے پر سیاہ داغ هو گا ،،
میرا جسم پسینے میں تر هو گیا
مگر اب کی بار یہ گرمی کا پسینہ نہیں ندامت اور شرمندگی کا پسینہ تھا
میں خود کو بہت چھوٹا اور حقیر سمجھ رہا تھا جو کہ بلکل سچ تھا ،،
اس دفعہ میری آواز میرے حلق میں کانٹے کی طرح چب رھی تھی ،
اور میں انہیں جاتا ھوا دیکھ رہا تھا
بہت مشکل سے میں نے انہیں آواز دی
ٹھہرو بیٹا ،،
میری آواز بڑبڑائی ہوئی تھی ،
میری آواز پہ دونوں بہن بھائی نے مڑ کر میری طرف دیکھا
اور ان کی آنکھوں میں آنسو تھے
میں نے بہت مشکل سے اپنے آنسو ضبط کرتے ہوۓ پوچھا
کتنی پنسلیں ہیں تمہارے پاس ؟؟
بچی نے اپنے بھائی کا ہاتھ چھوڑا اور ڈور کر میرے قریب آ کر مجھ سے پوچھا
صاحب جی آپ ساری پنسلیں لو گے ؟؟
اس کی آنکھوں میں عجیب سی چمک تھی ،،
میں نے رخ دوسری طرف کر کے آنسو ضبط کرتے ہوۓ کہا ہاں ساری لوں گا کتنے کی ہیں سب ؟؟
میں اس کے سامنے رونا نہیں چاہتا تھا
مگر دوسری طرف منہ کر کے میرا ضبط ٹوٹ گیا اور آنسو میری آنکھوں سے میرے گالوں پہ بہہ گئے
میں کن اکھیوں سے بس ایک بار اسے دیکھ پایا
جو پنسلیں گن رھی تھی
میرا دل چاہ رہا تھا میں بچوں کی طرح پھوٹ پھوٹ کے رووں
صاحب جی 9 پنسلیں ہیں ساری
10 روپے کے حساب سے 90 روپے بنے
وہ میری طرف پنسلیں کر کے حساب بتا رھی تھی
میں نے والٹ سے 100 روپے کا نوٹ نکالا اور اسے تھما دیا
اس نے بھائی کے ہاتھ سے 10 کا اکلوتا نوٹ پکڑا جو کہ شائد صبح سے اب تک کی کمائی تھا
اور میرے ہاتھوں میں دیتے ہوۓ بولی
شکریہ صاحب جی
میں چاہتا تھا اس کے معصوم اور ننھے ہاتھ چوم لوں اور میرے والٹ میں جتنے پیسے ہیں سب انہیں دے دوں

مگر اس کی خودداری میں دیکھ چکا تھا
میں انہیں دور جاتا ھوا دیکھ رہا تھا
اور میری آنکھوں میں اب کی بار خوشی اور احساس کے آنسو تھے ،،وہ پنسلیں آج بھی میرے پاس ہیں
انہیں جب بھی دیکھتا ھوں عجیب سے دل کش احساس میں گم هو جاتا ھوں
اور وھی جملہ میری سوچوں میں بار بار گونجتا ھے
،،،،،،،،،،، ماں کہتی ھے جو بھیک مانگتے ہیں ،قیامت والے دن ان کے ماتھے پہ ،،،، سیاہ داغ هو گا ،،،،ہمارے معاشرے میں بہت سے ایسے لوگ ہیں جو بھیک مانگنے کو ہنر سمجھتے ہیں اللہ پاک ایسے لوگوں کو ہدایت دے.

english translation

  • Dark spots on forehead, *
    The heat and the heat made it difficult for me to breathe and the car’s AC from above stopped working.

I parked the car in the shade on the side of the road to reduce the heat of the car and eat some fresh air and got out of the car myself and started cursing my luck.
This AC also had to go bad today.
I was muttering in my mouth
That suddenly I was attracted by an innocent voice.
Sir, my brother has not eaten since morning
I haven’t had a pencil since morning
It was a 12- or 13-year-old girl who was holding a bundle of pencils in one hand and a finger in the other hand in her younger brother’s hand.
Her younger brother was looking at my face and sometimes at his sister with strange questioning eyes.
Sir, take a pencil for only 10 rupees.
The girl insisted on me again
I was sick from the heat
I wanted to reprimand them both and chase them away, but then, not wanting to know why, my hand went into my pocket.
I took out my wallet and handed the 50 note to the girl and became very generous in myself and said to her in an arrogant tone, “Take this.”
Girl, I don’t need my accent. Quickly, sir, how many pencils should I give ??
One of 10 and five of 50,
There was a strange joy in his voice and eyes
Take sir g5 i’m hungry since morning too
And she started counting the pencils.
I was strangely angry with him
And turning to the other side, I spoke
Take the money and don’t let me die
There was no answer on the other side, just silence.
After a few moments I turned around thinking that they would both be gone.
But my guess turned out to be wrong
There was moisture in the girl’s eyes and her voice was muffled in her throat
Passing the fifty note to me, he spoke to me with great difficulty.
No sir
I do not beg
The mother says those who beg on their foreheads on the Day of Resurrection
There will be black spots

Saying this, she handed me the fifty note and took her brother’s hand and turned back.
I watched them go with wide eyes
I could feel my heart falling into a very deep abyss
This sentence was echoing loudly in my ears and mind.
The mother says that those who beg will have a black mark on their foreheads on the Day of Resurrection.
My body was drenched in sweat
But this time it was not a sweat of heat, it was a sweat of shame and embarrassment
It was true that I was feeling very small and insignificant.
This time my voice was biting like a thorn in my throat,
And I was watching them go
With great difficulty I called them
Wait son
My voice was muttering,
At my voice, the two siblings turned and looked at me
And there were tears in his eyes
I asked with great difficulty, holding back my tears
How many pencils do you have ??
The girl let go of her brother’s hand and approached me with a string and asked me
Sir, will you take all the pencils ??
There was a strange gleam in his eye.
I turned to the other side and seized the tears and said yes I will take all of them.
I didn’t want to cry in front of him
But facing the other side, my grip was broken and tears flowed from my eyes to my cheeks
With what eyes did I see it only once?
Who was counting pencils
My heart wanted me to cry like a child
Mr. G9 pencils are all
10 became 90 rupees
She was pointing pencils at me
I took out a Rs 100 note from my wallet and handed it over
He grabbed the only 10 note from his brother’s hand, which he had probably earned since morning
And speaking in my hands
Thank you sir
I wanted to kiss her innocent little hands and give her all the money in my wallet

But I had seen it in its own right
I watched them go away
And there were tears of joy and emotion in my eyes now, those pencils I still have today
Every time I see them, I get lost in a strangely fascinating feeling
And the same phrase resonates in my mind over and over again
The mother says that those who beg will have a black mark on their foreheads on the Day of Judgment. There are many people in our society who do not beg. May Allah guide such people who understand skills.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Create your website at WordPress.com
Get started
%d bloggers like this:
search previous next tag category expand menu location phone mail time cart zoom edit close