GreaT TunneL


پاکستان میں موجود دنیا کی سب سے بڑی ریلوے ٹنل کی حیرت انگیز داستان

کوئٹہ سے ایک سو تیرہ کلو میٹر دور ایک پہاڑی سلسلہ ہے جسے خواجہ عمران کا پہاڑی سلسلہ کہا جاتا ہے اس پہاڑی سلسلے میں شانزلہ اور شیلا باغ کے درمیان دنیا کی سب سے بڑی ریلوے ٹنل ہے جسے خوجک ٹنل کہتے ہیں، یہ وہی ٹنل ہے جس کی تصویر پانچ روپے کے متروک نوٹ پر ہوا کرتی تھی۔

یہ ٹنل 14 اپریل 1888ء کو تعمیر ہونا شروع ہوئی، یہ 5 کلومیٹر لمبی ہے اور اس کی تعمیر میں لگ بھگ آٹھ سو مزدور ہلاک ہوئے اور ان میں سے اکثر وہیں آس پاس دفن ہو گئے اس ٹنل میں ایک کروڑ ستانوے لاکھ چوبیس ہزار چار سو چھبیس اینٹیں لگی ہیں مزدوروں کی اول صف کھدائی کرتی جاتی جبکہ پچھلی اینٹیں لگاتی اور ان سے پیچھلی صف پٹڑی بچھاتی جاتی، بھاری مشینری کا وجود نہ ہونے کی وجہ سے کھدائی کا سارا کام انسانی ہاتھوں سے ہوتا۔

اس ٹنل کی تعمیر کے لیے 80 ٹن پانی روزانہ کی بنیاد پہ صرف ہوتا، دن رات کام کرنے کے لیے چھ ہزار پانچ سو چورانوے چراغ جلتے جو پوری ٹنل کو اندر سے روشن رکھتے، مزدوروں کی ریفریشمنٹ کے لیے آج کے انڈیا کے علاقے سے مشہور زمانہ رقاصہ شیلا منگوائی گئی جو رات کو رقص کرتی اور دن کے تھکے ماندے مزدوروں کی تفریح کا کچھ سامان پیدا کیا جاتا۔

اب آئیے اس دلچسپ و عجیب ٹنل کے سب سے مزیدار پہلو کی طرف، اس ٹنل کے انجنئیر جس نے اس کا سروے کیا تھا، اس کے مطابق اگر پہاڑ کے دونوں طرف سے اس ٹنل کی کھدائی کی جائے تو 3 سال 4 ماہ اور 21 روز بعد دونوں طرف سے کھدائی کرنے والے مزدور ایک دوسرے سے آن ملیں گے۔

5 ستمبر 1891ء کو انجنیئر کے لگائے اور بتائے گئے تخمینے کے مطابق اس ٹنل نے مکمل ہوناتھا، مقررہ تاریخ نزدیک سے نزدیک آتی جا رہی تھی اور سرا نہیں مل رہا تھا، چند لوگوں نے افواہیں اڑانا شروع کر دیں کہ مزدور راستہ بھول کر راستے سے ہٹ گئے ہیں، انجنئیر نے غلط سروے کیا، ناقص منصوبہ بندی کی وجہ سے کروڑوں ڈوب جائیں گے، مگر انجنئیر پر امید تھا۔

مقررہ تاریخ کو دونوں طرف آنے والی اور بچھائی جانے والی پٹڑی کے آخری بولٹ لگنے تھے، دن بارہ بجے تک ٹنل کے اندر سے کوئی خبر نہ آئی، ساری رات بے چینی سے ٹہلتا انجنیئر اب بھی ٹہل رہا تھا، اسے لگا کہ آج اس کا علم اسے دھوکا دے گیا، آج اس کا سب سے بڑا خواب پورا ہونے کی بجائے ریزہ ریزہ ہو رہا تھا، انجنیئر چپکے سے اٹھا اور پہاڑی کے اوپر اس مقام پر جا پہنچا جہاں پر رات کو شیلا رقص کرتی تھی،وہاں پہنچ کے رکا چند لمحے ٹنل کے دھانے پر نظر ڈالی اور پہاڑی کی چوٹی سے گہری کھائی میں چھلانگ لگا دی، اور تقریبا‘‘ عین اسی وقت دونوں طرف سے کھدائی کرتے ایک دوسرے کی طرف بڑھتے مزوروں کے درمیان ریت کی آخری دیوار بھی گر گئی۔

دنیا کی سب سے بڑی خوجک ٹنل مکمل ہو گئی، دونوں طرف کے مزدوروں نے ایک دوسرے سے گلے ملنے کے بعد اپنی اپنی مخالف سمت میں دوڑ لگا دی اور نعرے لگاتے چیختے چلاتے اڑھائی اڑھائی کلومیٹر کا فاصلہ طے کر کے ٹنل سے باہر نکلے دونوں طرف جشن کا سماں برپا ہو گیا، معاً کسی کو انجنیئر کا خیال آیا اور جب تلاش کی گئی تو انجینئر غائب، کافی دیر بعد کسی نے کھائی میں کسی انسانی نعش کی نشاندہی کی اور جب دیکھا گیا تو وہ وہی انجنیئر تھا جس نے دنیا کی سب سے بڑی ٹنل کا سروے کیا اور اس کی فزیبلٹی تیار کی اور مقررہ مدت تک اپنی کمٹمنٹ پوری نہ ہونے کی صورت میں ندامت سے بچنے کے لیے پہاڑ کی چوٹی پر سے چھلانگ لگا دی۔

تاریخ میں اس جیسے کئی واقعات ملیں گے مگر تمام کے تمام “کافروں” کے ہاں، اگر آج کے پاکستانی حکمران یا ذمہ داران ہوتے تو یقیناً درمیان میں ہی چھوڑ کر کس نئی طرف سے شروع کرا دیتے اور اگر پھر بھی کامیاب نہ ہوتے تو پہاڑ سے چھلانگ لگانا تو دور کی بات آنکھیں تک نیچی نہ کرتے، اپنے ملک میں بڑی سے بڑی آفت، مصیبت یا حادثے پے ذمہ داران یوں بغلیں جھاڑ دیتے ہیں جیسے کچھ ہوا ہی نہیں؟


translation

Amazing story of the world’s largest railway tunnel in Pakistan *

One hundred and thirteen kilometers away from Quetta is a mountain range called Khwaja Imran’s mountain range. In this mountain range is the world’s largest railway tunnel between Shanzla and Sheila Bagh called Khojak Tunnel. The picture was on an obsolete five rupee note.

Construction of the tunnel began on April 14, 1888. It is 5 km long and killed about 800 workers, most of whom were buried nearby. Twenty-six bricks are laid. The first row of laborers would dig while the back bricks would be laid and the back row would be laid with them. Due to the absence of heavy machinery, all the work of digging would be done by human hands.

The construction of this tunnel would have required 80 tons of water on a daily basis, burning six thousand five hundred and ninety-four lamps to work day and night which would have illuminated the entire tunnel from the inside. Dancer Sheila was invited to dance at night and to entertain some of the day’s weary laborers.

Now let’s look at the most delicious aspect of this interesting and strange tunnel, according to the engineer of this tunnel who surveyed it, if this tunnel is dug on both sides of the mountain, then 3 years 4 months and 21 days Later, diggers from both sides will meet each other.

The tunnel was supposed to be completed on September 5, 1891, according to the engineer’s estimates. The due date was approaching and the end could not be found. Some people started spreading rumors that the workers had forgotten the route. Gone, the engineer did the wrong survey, crores will sink due to poor planning, but the engineer was optimistic.

On the appointed date the last bolts of the track coming and going on both sides were to be fastened. No news came from inside the tunnel till twelve o’clock in the afternoon. The engineer, who had been walking restlessly all night, was still walking. Knowledge deceived him, today his biggest dream was falling apart instead of being fulfilled, the engineer got up secretly and reached the place where Sheila used to dance at night on the top of the hill. For a moment he looked at the edge of the tunnel and jumped into a deep ravine from the top of the hill, and at about the same time the last wall of sand fell between the laborers digging from both sides.

The world’s largest excavation tunnel was completed, with workers on both sides embracing each other, running in opposite directions, shouting slogans and walking a distance of two and a half kilometers, and exiting the tunnel on both sides. The festivities were over, but someone thought of an engineer and when he was found, the engineer disappeared. A long time later, someone pointed to a human corpse in a ditch and when he was seen, he was the same engineer who killed everyone in the world. He surveyed the tunnel and prepared its feasibility and jumped from the top of the mountain to avoid embarrassment if his commitment was not fulfilled within the stipulated time.

There will be many such incidents in history, but in the case of all the “infidels”, if there were today’s Pakistani rulers or officials, they would have left it in the middle and started from what new side, and if they still did not succeed, the mountains If you do not take the leap from the distance, the people responsible for the biggest disaster, trouble or accident in their country shake their arms as if nothing has happened?


1 thought on “GreaT TunneL

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Create your website at WordPress.com
Get started
%d bloggers like this:
search previous next tag category expand menu location phone mail time cart zoom edit close