2 Prathas (bread)

* 2 prathas *

A worrying and inspiring event,

A man named Abu Nasr al-Sayyad was living in poverty with his wife and a child.  One day he was leaving his wife and child exhausted with hunger and weeping in the house and was going to steal from grief when on his way he came across a religious scholar Ahmad bin Miskin, whom Abu Nasr said when he saw him.  O Sheikh, I am afflicted with sorrows and I am tired of sorrows.
The Sheikh said, “Follow me. We are both walking on the sea.”
Arriving at the sea, Sheikh Sahib asked him to offer two rak’ats of supererogatory prayers.
For the first time, a huge fish was caught in the net.  Sheikh Sahib said to Abu Nasr, go and sell this fish and use the money to buy some food and drink for your family.
Abu Nasr went to the city and sold the fish. With the money he received, he bought a pratha and a sweet pratha. He went straight to Sheikh Ahmad ibn Miskin and asked him to accept some of these prathas.  Sheikh Sahib said, “If you had thrown a net for your food, no fish would have been caught. I did good to you as if for my own good and not for a wage.”  Take this pratha and feed your family.
Abu Nasr was on his way home happily for Pratha when he saw a hungry woman crying on the way, next to whom was her helpless son.  Abu Nasr looked at the parathas in his hands and said to himself, “What is the difference between this woman and her child and her own child and wife? The matter is the same. They are also hungry and they are also hungry.”  Are  To whom  He looked into the woman’s eyes and could not see her tears and bowed his head.  He pointed to the old woman and said, “Take this.”  Eat yourself and feed your son too.  Happiness spread on the woman’s face and a smile spread on her son’s face.
Abu Nasr walked back to his house with a sad heart, wondering how he would cope with his hungry wife and son.
On the way home he saw a preacher saying:  Is there anyone who will join him with Abu Nasr?  The people said to the preacher, “Look, this is Abu Nasr.”  He said to Abu Nasr;  Your father had entrusted me with thirty thousand dirhams twenty years ago today, but he did not tell me what to do with this money.  Ever since your father died I have been looking for someone to meet me.  Today I have found you, so take this thirty thousand dirhams, this is your father’s property.
Abu Nasr says;  I sat down and became rich.  I built many houses and my business expanded.  I have never been stingy in giving in the name of Allah, I used to give thousands of dirhams in charity at once.  I was jealous of how generously I had become a charitable person.
Once I dreamed that the day of reckoning had come and the scales had been set in the field.  The preacher called for Abu Nasr to be brought and his sins and rewards to be weighed.
Says  If my good deeds were placed on one side and my sins on the other side, then the scale of sins was heavy.
I asked, “Where are all my alms that I used to give in the way of Allah?”
The weighers put my alms in the scales of goodness.  Underneath the charity of every thousand dirhams was the coating of selfishness, my desire for self-expression and hypocrisy which made these charities lighter than cotton.  The weight of my sins was still heavy.  I cried and said, “Oh, how can I be saved?”
The preacher heard me and then asked;  Is there any other way to do it?
I heard a floor saying yes there are two parathas given by him which have not been weighed yet.  When they were placed on two old scales, the scales of goodness must have risen, but now they were neither equal nor greater.
The preacher asked again;  Is there any other process?  The angel replied, “Yes, there is something left for him.”  The preacher asked, “What is that?”  He said the tears of the woman to whom he had given his two prathas.
The tears of a woman were poured into the scales of virtues, whose mountain-like weight made the scales of virtues equal to the scales of sins.  Abu Nasr says, “I am glad that now I will be saved.”
The preacher asked, “Is there anything else to do?”
The angel said;  Yeah Al that sounds pretty crap to me, Looks like BT aint for me either.  Smile. The scale of virtues placed in the scale became heavier and heavier.  This man has been saved.
Abu Nasr says;  My sleep opened my eyes and I said to myself;  O Abu Nasr, today is not your great charity but yours
“Today I saved you 2 loaves of bread.”

Movable
Finally a small request
Be sure to pass it on to others after reading it so that anyone else can benefit

*2پراٹھے*

ایک فکرانگیز اور متاثرکن واقعہ،

ابو نصر الصیاد نامی ایک شخص، اپنی بیوی اور ایک بچے کے ساتھ غربت و افلاس کی زندگی بسر کر رہا تھا۔ ایک دن وہ اپنی بیوی اور بچے کو بھوک سے نڈھال اور بلکتا روتا گھر میں چھوڑ کر خود غموں سے چور کہیں جا رہا تھا کہ راہ چلتے اس کا سامنا ایک عالم دین احمد بن مسکین سے ہوا، جسے دیکھتے ہی ابو نصر نے کہا؛ اے شیخ میں دکھوں کا مارا ہوں اور غموں سے تھک گیا ہوں۔
شیخ نے کہا میرے پیچھے چلے آؤ، ہم دونوں سمندر پر چلتے ہیں۔
سمندر پر پہنچ کر شیخ صاحب نے اُسے دو رکعت نفل نماز پڑھنے کو کہا، نماز پڑھ چکا تو اُسے ایک جال دیتے ہوئے کہا اسے بسم اللہ پڑھ کر سمندر میں پھینکو۔
جال میں پہلی بار ہی ایک بڑی ساری عظیم الشان مچھلی پھنس کر باہر آ گئی۔ شیخ صاحب نے ابو نصر سے کہا، اس مچھلی کو جا کر فروخت کرو اور حاصل ہونے والے پیسوں سے اپنے اہل خانہ کیلئے کچھ کھانے پینے کا سامان خرید لینا۔
ابو نصر نے شہر جا کر مچھلی فروخت کی، حاصل ہونے والے پیسوں سے ایک قیمے والا اور ایک میٹھا پراٹھا خریدا اور سیدھا شیخ احمد بن مسکین کے پاس گیا اور اسے کہا کہ حضرت ان پراٹھوں میں سے کچھ لینا قبول کیجئے۔ شیخ صاحب نے کہا اگر تم نے اپنے کھانے کیلئے جال پھینکا ہوتا تو کسی مچھلی نے نہیں پھنسنا تھا، میں نے تمہارے ساتھ نیکی گویا اپنی بھلائی کیلئے کی تھی نا کہ کسی اجرت کیلئے۔ تم یہ پراٹھے لے کر جاؤ اور اپنے اہل خانہ کو کھلاؤ۔
ابو نصر پرااٹھے لئے خوشی خوشی اپنے گھر کی طرف جا رہا تھا کہ اُس نے راستے میں بھوکوں ماری ایک عورت کو روتے دیکھا جس کے پاس ہی اُس کا بیحال بیٹا بھی بیٹھا تھا۔ ابو نصر نے اپنے ہاتھوں میں پکڑے ہوئے پراٹھوں کو دیکھا اور اپنے آپ سے کہا کہ اس عورت اور اس کے بچے اور اُس کے اپنے بچے اور بیوی میں کیا فرق ہے، معاملہ تو ایک جیسا ہی ہے، وہ بھی بھوکے ہیں اور یہ بھی بھوکے ہیں۔ پراٹھے کن کو دے؟ عورت کی آنکھوں کی طرف دیکھا تو اس کے بہتے آنسو نا دیکھ سکا اور اپنا سر جھکا لیا۔ پراٹھے عوررت کی طرف بڑھاتے ہوئے کہا یہ لو؛ خود بھی کھاؤ اور اپنے بیٹے کو بھی بھی کھلاؤ۔ عورت کے چہرے پر خوشی اور اُس کے بیٹے کے چہرے پر مسکراہٹ پھیل گئی۔
ابو نصر غمگین دل لئے واپس اپنے گھر کی طرف یہ سوچتے ہوئے چل دیا کہ اپنے بھوکے بیوی بیٹے کا کیسے سامنا کرے گا؟
گھر جاتے ہوئے راستے میں اُس نے ایک منادی والا دیکھا جو کہہ رہا تھا؛ ہے کوئی جو اُسے ابو نصر سے ملا دے۔ لوگوں نے منادی والے سے کہا یہ دیکھو تو، یہی تو ہے ابو نصر۔ اُس نے ابو نصر سے کہا؛ تیرے باپ نے میرے پاس آج سے بیس سال پہلے تیس ہزار درہم امانت رکھے تھے مگر یہ نہیں بتایا تھا کہ ان پیسوں کا کرنا کیا ہے۔ جب سے تیرا والد فوت ہوا ہے میں ڈھونڈتا پھر رہا ہوں کہ کوئی میری ملاقات تجھ سے کرا دے۔ آج میں نے تمہیں پا ہی لیا ہے تو یہ لو تیس ہزار درہم، یہ تیرے باپ کا مال ہے۔
ابو نصر کہتا ہے؛ میں بیٹھے بٹھائے امیر ہو گیا۔ میرے کئی کئی گھر بنے اور میری تجارت پھیلتی چلی گئی۔ میں نے کبھی بھی اللہ کے نام پر دینے میں کنجوسی نا کی، ایک ہی بار میں شکرانے کے طور پر ہزار ہزار درہم صدقہ دے دیا کرتا تھا۔ مجھے اپنے آپ پر رشک آتا تھا کہ کیسے فراخدلی سے صدقہ خیرات کرنے والا بن گیا ہوں۔
ایک بار میں نے خواب دیکھا کہ حساب کتاب کا دن آن پہنچا ہے اور میدان میں ترازو نصب کر دیا گیاہے۔ منادی کرنے والے نے آواز دی ابو نصر کو لایا جائے اور اُس کے گناہ و ثواب تولے جائیں۔
کہتا ہے؛ پلڑے میں ایک طرف میری نیکیاں اور دوسری طرف میرے گناہ رکھے گئے تو گناہوں کا پلڑا بھاری تھا۔
میں نے پوچھا آخر کہاں گئے ہیں میرے صدقات جو میں اللہ کی راہ میں دیتا رہا تھا؟
تولنے والوں نے میرے صدقات نیکیوں کے پلڑے میں رکھ دیئے۔ ہر ہزار ہزار درہم کے صدقہ کے نیچے نفس کی شہوت، میری خود نمائی کی خواہش اور ریا کاری کا ملمع چڑھا ہوا تھا جس نے ان صدقات کو روئی سے بھی زیادہ ہلکا بنا دیا تھا۔ میرے گناہوں کا پلڑا ابھی بھی بھاری تھا۔ میں رو پڑا اور کہا، ہائے رے میری نجات کیسے ہوگی؟
منادی والے نے میری بات کو سُنا تو پھر پوچھا؛ ہے کوئی باقی اس کا عمل تو لے آؤ۔
میں نے سُنا ایک فرشہ کہہ رہا تھا ہاں اس کے دیئے ہوئے دو پُراٹھے ہیں جو ابھی تک میزان میں نہیں رکھے گئے۔ وہ دو پُراٹھے ترازو پر رکھے گئے تو نیکیوں کا پلڑا اُٹھا ضرور مگر ابھی نا تو برابر تھا اور نا ہی زیادہ۔
مُنادی کرنے والے نے پھر پوچھا؛ ہے کچھ اس کا اور کوئی عمل؟ فرشتے نے جواب دیا ہاں اس کیلئے ابھی کچھ باقی ہے۔ منادی نے پوچھا وہ کیا؟ کہا اُس عورت کے آنسو جسے اس نے اپنے دو پراٹھے دیئے تھے۔
عورت کے آنسو نیکیوں کے پلڑے میں ڈالے گئے جن کے پہاڑ جیسے وزن نے ترازو کے نیکیوں والے پلڑے کو گناہوں کے پلڑے کے برابر لا کر کھڑا کر دیا۔ ابو نصر کہتا ہے میرا دل خوش ہوا کہ اب نجات ہو جائے گی۔
منادی نے پوچھا ہے کوئی کچھ اور باقی عمل اس کا؟
فرشتے نے کہا؛ ہاں، ابھی اس بچے کی مُسکراہٹ کو پلڑے میں رکھنا باقی ہے جو پراٹھے لیتے ہوئے اس کے چہرے پر آئی تھی۔ مسکراہٹ کیا پلڑے میں رکھی گئی نیکیوں والا پلڑا بھاری سے بھاری ہوتا چلا گیا۔ منادی کرنے ولا بول اُٹھا یہ شخص نجات پا گیا ہے۔
ابو نصر کہتا ہے؛ میری نیند سے آنکھ کھل گئی اور میں نے اپنے آپ سے کہا؛ اے ابو نصر آج تجھے تیرے بڑے بڑے صدقوں نہیں بلکہ
“آج تجھے تیری 2 روٹیوں نےبچا لیا”.

﴿منقول﴾
آخر میں اک چھوٹی سی درخواست
پڑھنے کے بعد اسے دوسروں تک ضرور پہنچادیں تاکہ کوئی اور بھی فائدہ اٹھا سکے

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Create your website with WordPress.com
Get started
%d bloggers like this:
search previous next tag category expand menu location phone mail time cart zoom edit close